function gmod(n,m){ return ((n%m)+m)%m; } function kuwaiticalendar(adjust){ var today = new Date(); if(adjust) { adjustmili = 1000*60*60*24*adjust; todaymili = today.getTime()+adjustmili; today = new Date(todaymili); } day = today.getDate(); month = today.getMonth(); year = today.getFullYear(); m = month+1; y = year; if(m<3) { y -= 1; m += 12; } a = Math.floor(y/100.); b = 2-a+Math.floor(a/4.); if(y<1583) b = 0; if(y==1582) { if(m>10) b = -10; if(m==10) { b = 0; if(day>4) b = -10; } } jd = Math.floor(365.25*(y+4716))+Math.floor(30.6001*(m+1))+day+b-1524; b = 0; if(jd>2299160){ a = Math.floor((jd-1867216.25)/36524.25); b = 1+a-Math.floor(a/4.); } bb = jd+b+1524; cc = Math.floor((bb-122.1)/365.25); dd = Math.floor(365.25*cc); ee = Math.floor((bb-dd)/30.6001); day =(bb-dd)-Math.floor(30.6001*ee); month = ee-1; if(ee>13) { cc += 1; month = ee-13; } year = cc-4716; if(adjust) { wd = gmod(jd+1-adjust,7)+1; } else { wd = gmod(jd+1,7)+1; } iyear = 10631./30.; epochastro = 1948084; epochcivil = 1948085; shift1 = 8.01/60.; z = jd-epochastro; cyc = Math.floor(z/10631.); z = z-10631*cyc; j = Math.floor((z-shift1)/iyear); iy = 30*cyc+j; z = z-Math.floor(j*iyear+shift1); im = Math.floor((z+28.5001)/29.5); if(im==13) im = 12; id = z-Math.floor(29.5001*im-29); var myRes = new Array(8); myRes[0] = day; //calculated day (CE) myRes[1] = month-1; //calculated month (CE) myRes[2] = year; //calculated year (CE) myRes[3] = jd-1; //julian day number myRes[4] = wd-1; //weekday number myRes[5] = id; //islamic date myRes[6] = im-1; //islamic month myRes[7] = iy; //islamic year return myRes; } function writeIslamicDate(adjustment) { var wdNames = new Array("Ahad","Ithnin","Thulatha","Arbaa","Khams","Jumuah","Sabt"); var iMonthNames = new Array("????","???","???? ?????","???? ??????","????? ?????","????? ??????","???","?????","?????","????","???????","???????", "Ramadan","Shawwal","Dhul Qa'ada","Dhul Hijja"); var iDate = kuwaiticalendar(adjustment); var outputIslamicDate = wdNames[iDate[4]] + ", " + iDate[5] + " " + iMonthNames[iDate[6]] + " " + iDate[7] + " AH"; return outputIslamicDate; }
????? ????

کرشماتی مائیکرو چِپ

عامر شکور | اپریل-2014
microchip

کرشماتی مائیکرو چِپ
امریکی محققین کی ایک ٹیم کو یقین ہے کہ اگلے دو برسوں میں انسانی دماغ میں تجرباتی طور پر وہ مائیکرو چِپ داخل کی جاسکتی ہے جو متاثرہ یا تباہ شدہ دماغ میں یادداشت کی بحالی میں مدد کرے گی۔ یونی ورسٹی آف ساؤدرن کیلی فورنیا، ویک فاریسٹ یونی ورسٹی اور دیگر جامعات سے وابستہ سائنس دانوں پر مشتمل ٹیم ایک دہائی سے زائد عرصے سے دماغی اُبھاروں (Hippocampus) پر توجہ مرکوز کیے ہوئے ہیں۔ محققین کا دعویٰ ہے کہ وہ یہ دریافت کرچکے ہیں کہ یاداشتیں ہمارے دماغ میں کہاں اور کیسے محفوظ ہوتی ہیں۔ سائنس دانوں کے مطابق اس تحقیق نے ایک ایسی مائیکروہ چِپ کی تخلیق کی راہ ہموار کردی ہے جو دماغ میں چوٹ لگنے کے باعث نسیان کے مرض میں مبتلا ہونے والے افراد، اور اسٹروک اور الزائم کے مریضوں کی یادداشت کی بحالی میں بے حد مفید ثابت ہوگی۔ ایک امریکی ٹیلی ویژن چینل کی رپورٹ کے مطابق سائنس دانوں نے چوہوں اور بندروں کے دماغوں پر تجربات کے ذریعے یہ ثابت کردیا ہے کہ ایک سلیکون چِپ سے نکلنے والے برقی اشارات کی صورت میں دماغی پیغامات کی نقل تیار کی جاسکتی ہے۔
سائنس دان اس امر کا اعتراف کرتے ہیں کہ اس قسم کی چِپ کی تیاری کے لیے الیکٹرونکس کے ضمن میں ابھی مزید کام کرنے کی ضرورت ہے، تاہم انھیں یقین ہے کہ یہ مرحلہ بھی جلد طے کرلیا جائے گا۔ ان کی اس خوش اُمیدی کا سبب مرگی جیسے امراض کے علاج کے لیے انسانوں میں الیکٹروڈامپلانٹس کا لگا یا جانا اور جسم انسانی کا ان امپلانٹس کے ساتھ ساتھ جدید ترین ٹیکنالوجی کے حامل مصنوعی بازو بھی لگائے گئے ہیں جو دماغ کی لہروں کو محسوس کرتے ہوئے ان کے مطابق عمل کرتے ہیں۔
سائنس دان اپنی دریافت پر بہت پُر جوش ہیں اور ان کا کہنا ہے کہ یادداشت کی بحالی کے لیے مریضوں کے دماغ میں نصب کی جانے والی ڈیوائس آئندہ پانچ سے دس برس میں تیار ہوسکتی ہے۔ یونی ورسٹی آف کیلی فورنیا کے نیوروسائنٹسٹ اور بایومیڈیکل انجنئیر پروفیسر ٹیڈ برجر کہتے ہیں، ”ہم فی الوقت یادداشتوں کو انفرادی طور پر واپس دماغ میں محفوظ کررہے ہیں۔ یہ بات میرے وہم و گمان میں بھی نہیں تھی کہ میں اپنی زندگی میں اپنے اس تصور کو حقیقت میں تبدیل ہوتے ہوئے دیکھوں گا۔ ہوسکتا ہے کہ میں اس مائیکرو چِپ سے فائدہ نہ اُٹھا سکوں مگر میرے بچے ضرور اس سے مستفید ہوسکیں گے۔“
اس تحقیق کے لیے سائنس دانوں نے دماغی اُبھاروں کو اپنی توجہ کا مرکز بنائے رکھا جو دماغ کے اندرونی حصے میں ہوتے ہیں اور مختصر المیعاد یادداشت سے حاصل ہونے والی معلومات کے ساتھ مربوط کرتا ہے۔ ماہرین کو یقین ہے کہ مستقبل کا یہ برین امپلانٹ دماغ کے عصبی پیغامات کی برقی اشارات کی صورت میں نقل کرسکے گا۔
سائنس دانوں کو اُمید ہے کہ یہ ڈیوائس ان مریضوں کے لیے بے حد مفید ثابت ہوگی جن کی دماغی سرگرمی کسی چوٹ یا اسٹروک کی وجہ سے متاثر ہوئی ہو۔ اس تحقیق کا حتمی مقصد الزائمر سے متاثرہ لوگوں کا علاج کرنا ہے مگر اس   کے لیے مزید تحقیق درکار ہوگی کیوں کہ یہ بیماری مریض کے دماغ کے کئی حصوں کو بہ یک وقت متاثر کرتی ہے۔